لانگ مارچ کی مکمل حمایت کرتےہیں,آل پارٹیز کانفرنس برطانیہ

لانگ مارچ کی مکمل حمایت کرتےہیں,آل پارٹیز کانفرنس برطانیہ

لانگ مارچ کی مکمل حمایت کرتےہیں,آل پارٹیز کانفرنس برطانیہ

بولٹن(بیورو رپورٹ)برطانیہ کے شہر بولٹن میں آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد جس میں مختلف سیاسی و سماجی تنظیموں کے نمائندوں کے ساتھ ساتھ عوام کی شرکت. جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے تمام مطالبات اور 11 مئی کے لانگ مارچ کی مکمل حمایت کا اعلان. آل پارٹیز کانفرنس میں بولٹن کی مختلف سیاسی اور سماجی تنظیموں کے نمائندوں نے آزاد کشمیر میں چلنے والی عوامی حقوق کی تحریک کے ساتھ یکجہتی اور عوام کے مطالبات کی مکمل حمایت کا اعلان کیا. شرکا کانفرنس نے اس بات پر زور دیا کہ گزشتہ 10 ماہ سے جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے زیر اہتمام چلنے والی عوامی حقوق کی تحریک مکمل طور پر پرامن تھی اور پرامن ہے. گزشتہ روز ڈڈیال اور باقی اضلاع میں کٹھ پتلی حکومت نے جان بوجھ کر اس تحریک کو طاقت، جبر اور تشدد سے روکنے اور بدنام کرنے کی سازش کی ہے جس کی ہم بھرپور مزمت کرتے ہیں، مقررین نے کہا کہ آزاد کشمیر کے عوام بنیادی انسانی سہولتوں سے 76 سالوں سے محروم ہیں، آزاد کشمیر میں ہمارے شہر اور قصبے ڈبو کر بجلی پیدا کی جاتی ہے جو پاکستان کو مفت میں بغیر کسی معاہدے کے فراہم کی جاتی ہے. ہزاروں میگا واٹ بجلی پیدا کرنے والا خطہ اس جدید دور میں 18 گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ کا شکار ہے. آزاد کشمیر میں نہ کوئی ڈھنگ کا ہسپتال ہے، نہ سکول نہ کالج اور نہ ہی ائرپورٹ یا کوئی مناسب سڑک ہے. شرکا کانفرنس نے کہا کہ آزاد کشمیر کے عوام اربوں روپے ٹیکس دیتے ہیں لیکن بدلے میں ریاست کی جانب سے کوئی بنیادی انسانی سہولت مہیا نہیں کی جاتی. عوام پر بےجا ٹیکسوں کابوجھ ہے. مقررین نے اس بات پر زور دیا کہ اپنے حقوق کے لیے پرامن احتجاج کرنا عوام کا حق ہے جس کو طاقت سے روکا نہیں جا سکتا. شرکا نے مظفرآباد کی کٹھ پتلی حکومت کو تنبیہ کی کہ اگر 11 مئی کے لانگ مارچ کو طاقت اور تشدد سے روکنے کی کوشش کی تو برطانیہ بھر میں پاکستانی سفارت خانوں کے ساتھ احتجاج دھرنے اور بھوک ہڑتال کی جائیں گی. انھوں نے کہا کہ پاکستان سے ایف سی اور پی سی بلوانا بین اقوامی کی خلاف ورزی ہے اور اس کو ریاست پر بیرونی حملہ تصور کیا جائے گا. شرکا نے کتھ پتلی وزیراعظم آزاد کشمیر سے مطالبہ کیا کہ اپنے سیاسی مستقبل کو محفوظ کرنے کے لیے عوام پر طاقت اور تشدد کا استعمال اور ایکشن کمیٹی کے ممبران کو چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کرتے ہوئے گرفتار کرنا قابل مزمت بھی ہے اور غیرقانونی بھی. مقررین نے جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے تمام مطالبات کی مکمل حمایت کرنے کا اعلان کیا.شرکا نے گرفتار شدگان کی فوری اور غیر مشروط رہائی کا مطالبہ کیا. شرکا نے آزاد کشمیر کے وزیراعظم وزرا اور ممبران قومی اسمبلی کو متنبہ کیا کہ اگر عوام کے جائز مطالبات کو تسلیم اور حل نہ کیا گیا اور تشدد اور طاقت سے اس تحریک کو روکنے کی کوشش کی گئی تو برطانوی کشمیری ہر جگہ ان کا پیچھا کریں گے اور اقتدار کے ایوانوں میں بیٹھے لوگوں کا محاسبہ کریں گے. شرکا کانفرنس نے 13 مئی کا پاکستانی قونصلیٹ براڈفورڈ اور لندن سفارت خانے کے باہر مظاہروں کی حمایت اور ان میں بھرپور شرکت کا بھی اعلان کیا. آل پارٹیز کانفرنس سے جمون کشمیر لبریشن فرنٹ کے شکیل جرال، عارف کیانی، طاہر سلیم، عوامی نیشنل پارٹی کے الطاف گلہاروی، ندیم اسلم، کشمیر فریڈم موومنٹ کے فیاض ایڈووکیٹ، بولٹن کے سیاسی اور سماجی راہنما سابق امیدوار برائے کونسلر ملک مظفر. مسلم کانفرنس کے ریاض بڑالوی، مسلم لیگ کے محمد فرید اور دیگر سیاسی اور سماجی راہنماوں نے خطاب کیا.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept